میں اداروں کی عزت کرنے والا بندہ ہوں ،فیصلے کیخلاف بولنا میرا اور میری پارٹی کا حق ہے:نواز شریف

اسلام آباد(ایم شاہد شہزاد)سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا ہے کہ میرے خلاف جو فیصلہ آیا ہے وہ میری اور قوم کی نظر میں ٹھیک نہیں تھا، بلیک لا ڈکشنری کا سہارا لے کر فیصلہ لکھا گیا، اب میرے خلاف توہین عدالت میں فل بنچ بنا دیا گیا ۔احتساب عدالت میں میڈیا سے غیررسمی گفتگو کرتے ہوئے نوازشریف نے کہا کہ میں اداروں کی عزت کرنے والا بندہ ہوں ،فیصلے کیخلاف بولنا میرا اور میری پارٹی کا حق ہے ،عمران خان خودسپریم کورٹ کے فیصلے کوکمزورقراردے چکے ہیں،ان کا کہناتھا کہ عدالتوں کے اندراورباہرپورے زورسے آوازیں اٹھناشروع ہوگئی ہیں،گزشتہ روزجج صاحب کے ریمارکس سب کے سامنے ہیں،جسٹس صاحب نے کہاکیس پاناماکاتھا،نااہلی اقامہ پرکی گئی،نوازشریف نے کہا کہ کمزورفیصلے پربات ہوسکتی ہے۔نوازشریف نے کہا کہ میں توہین کرنے والابندہ نہیں، فیصلے خود بولتے ہیں،فیصلے دینے والوں کوسوچناچاہئے قوم کوان کے فیصلے تسلیم نہیں۔انہوں نے کہا کہ میرے مقابلے میں دیگرافراد کے فیصلے بھی لوگوں کے سامنے ہیں،عمران خان نے اقبال جرم کیاپھربھی صادق اورامین ٹھہرے،نوازشریف نے کہاکہ عمران خان غلطی تسلیم کررہے تھے لیکن عدالت نے کہااس طرف نہ جائیں۔ن لیگ کے قائد نے کہا کہ عوام کی توہین ہوئی،وہ درخواست کہاں دائرکریں؟،محترم ججز نے ہمارے خلاف فیصلہ دیا اورریفرنس بھی خودبنائے،ہمارے خلاف فیصلے کے بعدمانیٹرنگ جج بھی بٹھادیاگیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow

Online Shopping in BangladeshCheap Hotels in Bangladesh